Posts

Showing posts from 2018

Zulmat Say Aik Roz Ujaalay Mein Aa Gaye / ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آگئے

ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آ گئے جب دھوپ نے ستایا تو سائے میں آ گئے
zulmat say aik roz ujaalay mein aa gaye jab dhoop ne sataaya to saaye mein aa gaye
خوابوں کا خانہ ڈھ گیا ہم کچھ نہ کر سکے دو چار اشک تھے وہ بھی  ملبے میں آگئے
KHwaaboon ka KHaana Daeh gaya hum kuch na kar sakay do chaar ashk thay woh bhi malbay mein aa gaye
جب تذکرہ ہوا ہے شکستہ  وفاؤں کا   کچھ میرے ساتھ آپ بھی  قصے میں آگئے 
jab tazkira huwa hai shikasta wafa’ouN ka kuch mere saath aap bhi qissay mein aa gaye
تب  کون سی گھڑی تھی وہ ہائے بُری گھڑی "ہم اک حسیں بہار کے دھوکے میں آ گئے"
tab kon si ghaDhi thi woh haa’ye buri ghaDhi hum ek hasee.n bahaar kay dhokay mein aa gaye
خوشیاں تو میری راہ سے یکدم گزر  گئیں دکھ بے شمار تھے مرے حصے میں آگئے
kHushyaa.n to meri rah se yakdam guzar gay’eeN dukh be-shumaar thay mere hissay mein aa gaye
صورت کوئی نکلنے کی آئی نہیں نظر ہم بد نصیب جب ترے گھیرے میں آگئے
soorat koi nikalnay ki aayi nahi.n nazar hum bad-naseeb jab tere gheray mei.n aa gaye
Bashir Mehtaab بشیر مہتاب

Bohot Aasaan Hai Ek Dusray Ka Ho Jana / بہت آسان ہے اک دوسرے کا ہو جانا

بہت آسان ہے اک دوسرے کا  ہو جانا پیار کا حد سے گزرنا ہے جدا ہو جانا
bohot aasaan hai ek dūsray ka ho jana pyaar ka hadd se guzarna hai juda ho jana
یہ تو تقدیر نے کھیلا ہے مرے جذبوں سے ورنہ دشوار نہ تھا اس کا مرا ہو جانا
ye to taqdeer ne khela hai mere jazboo.n se warna dushwaar na tha uss ka mera ho jana
میں تو مفلس ہوں مرے پاس ہنر کوئی نہیں ذرد پتے کی تمنا ہے ہرا ہو جانا
mein to muflis hoo.n mere paas hunar koi nahi zard pattay ki tamanna hai hara ho jana
اس جگہ آ کے یہ معلوم ہوا ہے مجھ کو کتنا مشکل ہے بلندی پہ کھڑا ہو جانا
iss jagah aa kay ye ma’loom huwa hai mujh ko kitna mushkil hai bulandi pe khaDha ho jana
لوگ جینے کے لئے کیا نہیں کرتے مہتاب پر سمجھ آیا نہ  تیرا  یوں فنا ہو جانا
log jeenay ke liye kya nahi kartay mehtaab par samajh aaya na tera yū.n fana ho jana
Bashir Mehtaab بشیر مہتاب

Naye Lamhaat Ko Roshan Banana Chahta HooN / نئے لمحات کو روشن بنانا چاہتا ہوں

نئے لمحات کو روشن بنانا چاہتا ہوں میں ہاتھوں کی لکیروں کو مٹانا چاہتا ہوں
اُسے  پاکر اُسے پھر سے گنوانا چاہتا ہوں میں  اپنے دل کی ہمت آزمانہ چاہتا ہوں
کھلی آنکھیں مجھے سپنے دکھایا کرتی ہیں جو وہ سپنے ایک دن سچ کر دکھانا چاہتا ہوں
رہے اجداد کی زندہ روایت اس لئے میں بڑی چاہت سے اک تختی بنانا چاہتا ہوں
جہاں اس دور کی الفت کو دفنایا گیا ہے وہاں میں ایک دو آنسوں بہانا چاہتا ہوں
- بشیرمہتاب
naye lamhaat ko roshan banana chahta hoo.n mei.n haatho.n ki lakeero.n ko mitaana chahta hoo.n
usay paakar usay phir say ganwana chahta hoo.n mei.n apnay dil ki himmat aazmaana chahta hoo.n
khuli aankhei.n mujhay sapnay dikhaya karti hai.n jo wo sapnay aik din sach kar dikhaana chahta hoo.n
rahay ajdaad ki zinda rawayat iss liye mei.n baDi chahat say ik taKHti banaana chahta hoo.n
jahaa.n iss dor ki ulfat ko dafnaya gaya hai waha.n mei.n aik do aansoo.n bahaana chahta hoo.n
- Bashir Mehtaab

AerooN GerooN Ko Bojh Lagtay Hai / ایروں، غیروں کو بوجھ لگتے ہیں

ایروں، غیروں کو  بوجھ لگتے ہیں جانے کتنوں کو بوجھ لگتے ہیں
آپ اِس اُس  کی بات ہی نہ کریں ہم تو  اپنوں کو  بوجھ لگتے ہیں
ہے یہی رونا   اب گلستاں کا پھول کلیوں کو بوجھ لگتے ہیں
ایک مدت سے میں نہیں سویا خواب آنکھوں کو بوجھ لگتے ہیں
اُگ چکے ہیں ہمارے جسموں پر  سر! جو تکیوں کو بوجھ لگتے ہیں
آپ سے ایک پل نہیں کٹتا ہم تو گھنٹوں کو بوجھ لگتے ہیں
جانتا ہوں  کہ  آج  میرے  قدم تیری گلیوں کو  بوجھ لگتے ہیں
ایک  آنگن  میں رہنا مشکل ہے رنگ پھولوں کوبوجھ لگتےہیں
 کیسے کوئی غزل  کہے مہتاب غم بھی لفظوں کو بوجھ لگتے ہیں
ـــــــــــ۔ بشیر مہتاب  ــــ AerooN  gerooN ko bojh laghtay hain jaanay kitnooN ko bojh laghtay hain
aap iss uss ki baat hi na kareN  hum to apnooN ko bojh laghte hain
hai yehi rona ab gulistaan ka phool kaliyooN ko bojh laghte hain
eik mudat se mai nhi sooya  Khawab ankhooN ko bojh lghte hain
ugg chukay hain hamarey jismooN par sarr! jo takyooN ko bojh laghte hain
aap se eik pall nhi kaT-ta hum to ghenTooN ko bojh laghte hain
jānta hu ki aaj mere qadam teri ghalyooN ko bojh laghte hain
eik aanghan mai rehna mushqil ha…

Jis Tarah Tum Ne Chalaya Mujh Ko / جس طرح تم نے چلایا مجھ کو

جس طرح تم نے چلایا  مجھ کو  کون دیتا یہاں رستہ مجھ کو 
عجب  آواز تھی ان آنکھوں کی کیسے کیسے نہ پکارا مجھ کو 
اپنی پہچاں یوں  بنائی تم نے سب کی نظروں میں گرایا مجھ کو 
زندگی بھر کا تعلق توڑا خوب آئینہ دکھایا مجھ کو 
نا خدا ڈوب چکا ہے میرا کیسے حاصل ہو کنارہ مجھ کو
میرا دل بھی ہے یہ دلی کی طرح جو  بھی آیا یہاں  لوٹا مجھ کو 
یہ بھی اک خاص ہنر مندی ہے تم نے جس آنکھ  سے دیکھا مجھ کو 
ایک مہتاب مجھے جانتا ہے اور کس نے یہاں جانا مجھ کو 
- بشیر مہتاب
jis tarha tum ne chalaya mujh ko kon deta yahaañ rassta mujh ko
ajab aawāz thi un ānkhoñ ki  kaise kaise na pukāra mujh ko
apni pehchaañ yuñ banayi tum ne sab ki nazrōñ meiñ giraya mujh ko
zindagi bhar ka ta'aluq toda khoob aayiena dikhaya mujh ko
na-khuda Doob chuka hai mera kese haasil ho kinara mujh ko
mera dil bi hai ye dilli* ki tarha jo bi aaya yahaañ loota mujh ko 
ye bhi ek khaas hunar mandi hai tum ne jis aankh se dekha mujh ko
aek mehtaab mujhay jānta hai aur kis ne yahāñ jāna mujh ko
- Bashir Mehtaab
(*dilli = Delhi)

Watan / وطن

پیارے  وطن تری  قسم ! ایسا  کریں گے ہم اب آنے والوں کے لئے رستہ کریں گے ہم 
 اے ملک ہم کو تجھ سے محبت  ہے بے شمار  تیرے ہر ایک ذرّے کی رکشا  کریں گے ہم 

ذرخیز یہ زمیں ہے شہیدوں کے خون سے جذبات یہ ہیں  جان بھی  وارا کریں گے  ہم 

ہم کو  ترنگا اپنا ہمیشہ عزیز تھا جب تک رہیں!  بلند یہ جھنڈا کریں گے ہم 

دیکھو نہ اس چمن کو سیاست  کی آنکھ سے ہر گز  نہ ایسی آنکھ  گوارا کریں گے 
  جو زندگی وطن کی حفاظت نہ کر سکے  تو ایسی زندگی  سے کنارہ  کریں گے ہم 

ہم فوجی ہیں بس ایک ہی وعدے پہ جیتے ہیں  جب تک جئیں گے دیش کی رکشا  کریں گے ہم 
- بشیرمہتاب

pyaare watan teri qasam aesa karei’N ge hum ab aane wālu ke liye rassta karei’N ge hum
ae mulk hum ko tujh se muhabbat hai be-shumār tere har eik zarrey ki raksha karei’N ge hum 
zarKHaiz ye zamee’N hai shahēdoo’N ke khoon se jazbāt ye hain jaan bi waara karei’N ge hum
hum ko tiranga apna hamesha azeez tha jab tak rahei'N! buland ye jhanDa karei’N ge hum
dekho na is chaman ko siyāsat ki aankh se harr giz na aesi aankh gawāra karei’N ge hum
jo zindgi watan ki hifāzat na karsake to a…

BooDhi Za’eef Aajiz Sochay Nikaal Kar / بوڑھی ضعیف عاجز سوچیں نکال کر

بوڑھی ضعیف عاجز سوچیں نکال کر
وہ چل رہے  ہیں اپنی روحیں نکال کر

جس شہر ہم گئے وہ اندھوں کا شہر تھا 
ہم نے بھی رکھ دیں اپنی آنکھیں نکال کر

دریا کو ہے  سمندر کی خامشی پسند 
دریا بھی بہہ رہا ہے موجیں نکال کر

دل کا  کوئی تعلق اُن سے ضرور تھا 
جو چل دئے ہیں دل کی  تاریں نکال کر 

مہتاب کوچہء دل   روحِ خیال سے
  آساں نہیں ہے لانا  غزلیں نکال کر

بشیر مہتاب

booDhi za’eef aajiz sochay nikaal kar
woh chal rahay hai apni rūheiñ nikaal kar

jis shehar hum gaye woh andhuñ ka shehar tha
hum nay bhi rakh di apni aankheiñ nikaal kar

darya ko hai samandar ki khaamshi pasand
darya bhi beh raha hai moujaiñ nikaal kar

dil ka koi ta’luq unn se zaroor tha
jo chal diye hai dil ki taarey nikaal kar

Mehtaab kocha’ dil rooh-e-khayal say
aasaañ nahiñ hai laana gazleiñ nikaal kar

Bashir Mehtaab

Asifa / آصفہ

زمیں رو رہی آسماں رو رہا ہے
ترے غم میں سارا جہاں رو رہا ہے 

Zameeñ ro rahi āsmāñ ro raha hai
Tere gamm maiñ sāra jahāñ ro raha hai

صدا آ رہی آصفہ آصفہ کی 
 ترے حال پر یہ زماں  رو رہا ہے

Sadha aa rahi Aasifa Aasifa ki
Tere haal par ye zamāñ ro raha hai

کہاں لے گئی تجھ کو فرقہ پرستی 
ترا ایک اک مہرباں رو رہا ہے 

Kahāñ lay gayi tujh ko firqa parasti
Tera aek ek mehrabāñ ro raha hai

کہیں پھول آئے کہیں پھول بکھرے
تمہارے لئے  گلستاں رو رہا ہے 

Kaheeñ phool aaye kaheeñ phool bikhray
Tumharay liye gulsitāñ ro raha hai

یہ کیسا چنا ہے گلِستاں کا مالی 
یہ پھولوں کے غم میں کہاں رو رہا ہے 

Ye kaisa chuna hai gulistaa’N ka maali
Ye phoolūñ kay gham meiñ kahāñ ro raha hai

ترے حال پر رحم آیا  نہ اُن کو
مرے دل  سے اُٹھتا دھواں رو رہا ہے 

Tere haal par reham aaya na un ko
Mere dil se uth’ta dhuwāñ ro raha hai

عذاب آ نہ جائے کہیں آسماں سے
ترے دکھ میں بچہ ، جواں رو رہا ہے

Azaab aā na jāye kaheeñ āsmāñ say
Tere dukh meiñ bacha, jawāñ ro raha hai

بشیرمہتاب
BashirMehtaab

Sab ki mojudgi samjhta hai/ سب کی موجودگی سمجھتا ہے

سب کی موجودگی سمجھتا ہے
دل! کسی کی کمی سمجھتا ہے
Sab ki mojūdgi samjhta hai
dil kisi ki kami samjhta hai
ایک ہی شخص سے میں واقف ہوں
جو مجھے اجنبی سمجھتا ہے
aik hi shakhs se mai waqif hu
jo mujhy ajnabi samjhta hai

گو مجھے جانتا نہیں لیکن
وہ مری شاعری سمجھتا ہے
go mujhy jaanta nhi lekinwo meri shayari samajhta hai
وصل کے اشک! ہجر کے آنسو وہ نمی کو نمی سمجھتا ہے
wasl ke ashk! Hijr ke ānsoo
wo nami ko nami samjhta hai
وہی میری زباں سے ہے واقف
جو مری خامشی سمجھتا ہے
wo hi meri zubāñ se hai waqif
jo meree khāmshi samjhta hai
آپ کے سامنے میں خوش ہوں مگر
میرے دکھ! "رام" ہی سمجھتا ہے 
aap ke sāmnay mai khush hu magar
mere dukh! “Raam” hi samjhta hai
یہی اردو زباں کا ہے جادو
اب مجھے  ہر کوئی سمجھتا ہے
yehi urdu zubāñ ka hai jaadu
ab mujhay harr koi samjhta hai
میں اُسے بات دل کی کہتا ہوں
وہ اِسے شاعری سمجھتا ہے
maiñ usay baat dil ki kehta huñ
wo isay shayari samjhta hai
اتنا نادان بھی نہیں ہے وہ
جو تمہاری ہنسی سمجھتا ہے
itna nadaan bi nahi hai wo
jo tumhari hansi samjhta hai
کون مہتا…

Jab Se Mere Raqeeb Ka Rassta Badal Gaya / جب سے مرے رقیب کا رستہ بدل گیا

جب سے مرے رقیب کا رستہ بدل گیا
تب سے مرے نصیب کا نقشہ بدل گیا

شیریں تھا کتنا  آپ کا  اندازِ گفتگو
دو چار سکے آتے ہی لہجہ بدل گیا

کس کی زبان سے مجھے دیکھو خبر مجھے
کیسے مرے حریف کا چہرہ بدل گیا

اُن کے بدلنے کا مجھے افسوس کچھ نہیں
افسوس یہ ہے اپنا ہی سایہ بدل گیا

جب سے بڑوں کی گھر سے حکومت چلی گئی
جنت  نما مکان کا   نقشہ بدل گیا

راہوں کی خاک چھانتا پھرتا ہوں آج تک
"رہبر بدل گیا کبھی رستہ بدل گیا"

کہتاہے اسکےجانے سے کچھ بھی نہیں ہوا
 مہتاب ..جبکہ دل کا وہ ڈھانچہ بدل گیا

بشیر مہتاب

Baaqi Raha Hai Kya Dil-e-Khaana Kharaab Mai'N / باقی رہا ہے کیا دلِ خانہ خراب میں

باقی رہا ہے کیا دلِ خانہ خراب میں
ہستی بھی مبتلا ہے مسلسل عذاب میں

سب ختم ہو چکا ہے تو اس پر سوال کیا
ہے میرے پاس کیا جو لکھوں گا جواب میں

ہوش  و حواس کھو گیا کیسے میں سب تمام
"ساقی نے کچھ ملا نہ دیا ہو شراب میں"

صورت تمام شہر میں اس سے نہیں ملی
جو شخص رات بھر نظر آتا ہے خواب میں

مہتاب اب کی بار تو ان کا قصور ہے
یہ سوچتا ہوں کیا وہ کہیں گے جواب میں
بشیر مہتاب

Jo Kehta Tha Tum Bin Guzaara Nahi'N Hai / جو کہتا تھا تُم بن گزارا نہیں ہے

جو کہتا تھا تُم بن گزارا نہیں ہے
وہی شخص دیکھو ہمارا نہیں ہے

کبھی ہم کو ہم سا ملا ہی نہ ساتھی
 کبھی ہم نے خود کو  سنوارا نہیں ہے

سبھی کو دلاسے دیا کرتا تھا جو
اُسی کا کوئی اب سہارا نہیں ہے

حسیں ہوتی ہے وہ خوابوں کی دنیا
کہ اس پر کسی کا اجارا نہیں ہے

میں نفرت کو الفت پڑھانے چلا ہوں
مرے حق میں کوئی ستارہ نہیں ہے

وہ اک عمر سے چل رہا ہے مسلسل
وہ تھک تو چکا پر وہ ہارا نہیں ہے

ترے غم کے دفتر پڑھے کون مہتاب
یہاں کون رنجوں کا مارا نہیں ہے

بشیر مہتاب
jo kehta tha tum bin guzaara nahi hai
wohi shakhs dekho hamara nahi hai
kabhi hum ko hum sa mila hi na sathi
kabhi hum ne khud ko sanwara nahi hai
sabhi ko dilasey diya karta tha jo
usi ka koi ab sahara nahi hai  
haseen hoti hai wo khawaboo'N ki duniyaa'N
ke us par kisi ka ijara nahi hai
mai nafrat ko ulfat padhaney chala hu
mere haq mai koi sitara nahi hai 
wo ek umar se chal raha hai musalsal
 wo thhak to chuka par wo haara nhi hai
tere ghum ke daftar padhey kon Mehtaab
yahaan kon rannju ka maara nahi hai
Bashir Mehtaab

Zulmat Se Aik Roz Ujaalay Mai'N Aa Gaye / ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آ گئے

ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آ گئے
جب دھوپ نے ستایا تو سائے میں آ گئے

خوابوں کا خانہ ڈھ گیا ہم کچھ نہ کر سکے
دو چار اشک تھے وہ بھی  ملبے میں آگئے

جب تذکرہ ہوا ہے شکستہ  وفاؤں کا
  کچھ میرے ساتھ آپ بھی  قصے میں آگئے

تب  کون سی گھڑی تھی وہ ہائے بُری گھڑی
"ہم اک حسیں بہار کے دھوکے میں آ گئے"

خوشیاں تو میری راہ سے یکدم گزر  گئیں
دکھ بے شمار تھے مرے حصے میں آگئے

صورت کوئی نکلنے کی آئی نہیں نظر
ہم بد نصیب جب ترے گھیرے میں آگئے
بشیر مہتاب

Koi Uss Se Gila Nahi Hota / کوئی اس سے گلہ نہیں ہوتا

کوئی اس سے گلہ نہیں ہوتا
وہ اگر بے وفا نہیں ہوتا

 میری نظروں سے دور رہتا ہے
وہ جو دل سے جدا نہیں ہوتا

دو مجھے اور درد دو صاحب
درد جب تک دوا نہیں ہوتا


جس کی ثابت  جڑیں نہیں ہوتی
وہ شجر بھی ہرا نہیں ہوتا

ماں کا احسان ایسا ہے پیارے
جو کبھی بھی ادا نہیں ہوتا


پیار ہر وقت ہر گھڑی بانٹو
زندگی کا پتہ نہیں ہوتا

ایک مفلس نے یہ کہا ہم سے
مفلسوں کا خدا نہیں ہوتا؟

 جانے کیسے قفس میں ہے مہتاب
ہائے اک پل  رہا نہیں ہوتا
بشیر مہتاب

Rukh Tumhaara Ho Jidhar Hum Bhi Udhar Ho Jaaye'N Ge / رخ تمہارا ہو جدھر ہم بھی اُدھر ہو جائیں گے

رخ تمہارا ہو جدھر ہم بھی اُدھر ہو جائیں گے
تم سے بجھڑینگے اگر تو دربدر ہو جائیں گے

زندگانی کے سفر میں لطف تب ہو گا نصیب
"ہم خیال و ہم نوا جب ہمسفر ہو جائیں گے"

آسمانوں کا سفر ہم طے کریں گے ایک روز
جب ہمارے حوصلوں میں بال و پر ہو جائیں گے

سادگی یوں ہی اگر لادے رہےتو ایک دن
سب تمہارے  اپنے تم سے بے خبر ہو جائیں گے


دیکھنا جس دن انہیں مقصد سمجھ میں آئے گا
منزلوں کی جستجو میں رہ گزر ہو جائیں گے


پودے ہیں اردو ادب کے آب و دانہ ڈالئے
آنے والے کل میں سائے اور ثمر ہو جائیں گے


ساقی ساغر کی ضرورت ہے کہاں میرے لئے
تیری آنکھوں کےہی پیالے پراثر ہو جائیں گے

وہ نہ جائیں گے کبھی مہتاب ظلمت کی طرف
وقت پر انجام سے واقف اگر ہو جائیں گے
بشیر مہتاب

Kis Masti Mai'N Ab Rehta Hoo'N / کس مستی میں اب رہتا ہوں

کس  مستی  میں اب  رہتا ہوں
خود کو خود میں ڈھونڈ رہا ہوں

دنیا میں سب سے ہی جدا ہوں
آخر  میں کس   دنیا   کا   ہوں

میں توخود کو بھول چکا ہوں
تم  بتلا دو  کون  ہوں کیا ہوں

یہ بھی نہیں ہے یاد مجھےاب
کیوں   آخر  روتا   رہتا    ہوں

اک   دنیا    ہے    میرے    اندر
 اس میں ہی میں گھوم رہا ہوں

مجھ کو نیند ہے پیاری یا پھر
اُس کوبھی میں ہی پیارا ہوں

وہ  رخ  اپنا  پھیر  چکے  ہیں
میں کس  کو  اپنا  کہتا  ہوں

ان  لفظوں نے منزل   چھینی
آپ چلیں.. میں بھی  آتا ہوں

من تو خوشیاں  بانٹ رہا ہے
میں قطرہ  قطرہ   روتا ہوں

خودکابوجھ ہےکتنا خود  پر
کتنا خود کو جھیل  رہا ہوں

مجھکوتم مہتاب نہ سمجھو
شاید  میں  اس کا  سایا ہوں
بشیر مہتاب