Jis Tarah Tum Ne Chalaya Mujh Ko / جس طرح تم نے چلایا مجھ کو

جس طرح تم نے چلایا  مجھ کو 
کون دیتا یہاں رستہ مجھ کو 

عجب  آواز تھی ان آنکھوں کی
کیسے کیسے نہ پکارا مجھ کو 

اپنی پہچاں یوں  بنائی تم نے
سب کی نظروں میں گرایا مجھ کو 

زندگی بھر کا تعلق توڑا
خوب آئینہ دکھایا مجھ کو 

نا خدا ڈوب چکا ہے میرا
کیسے حاصل ہو کنارہ مجھ کو

میرا دل بھی ہے یہ دلی کی طرح
جو  بھی آیا یہاں  لوٹا مجھ کو 

یہ بھی اک خاص ہنر مندی ہے
تم نے جس آنکھ  سے دیکھا مجھ کو 

ایک مہتاب مجھے جانتا ہے
اور کس نے یہاں جانا مجھ کو 

- بشیر مہتاب

jis tarha tum ne chalaya mujh ko
kon deta yahaañ rassta mujh ko

ajab aawāz thi un ānkhoñ ki 
kaise kaise na pukāra mujh ko

apni pehchaañ yuñ banayi tum ne
sab ki nazrōñ meiñ giraya mujh ko

zindagi bhar ka ta'aluq toda
khoob aayiena dikhaya mujh ko

na-khuda Doob chuka hai mera
kese haasil ho kinara mujh ko

mera dil bi hai ye dilli* ki tarha
jo bi aaya yahaañ loota mujh ko 

ye bhi ek khaas hunar mandi hai
tum ne jis aankh se dekha mujh ko

aek mehtaab mujhay jānta hai
aur kis ne yahāñ jāna mujh ko

- Bashir Mehtaab

(*dilli = Delhi)

Comments

POPULAR POSTS:

Gazal -Bachpann / غزل - بچپن

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

Haseen Dil Ruba Chandni Gulbadan Hai / حسیں دلربا چاندنی گل بدن ہے

Yaar Be-Khabar Ho Tum / یار بے خبر ہو تم

Ye Kon Aagaya Hai Ye Kaisi Bahaar Hai / یہ کون آگیا ہے یہ کیسی بہار ہے