Yaar Be-Khabar Ho Tum / یار بے خبر ہو تم


یار بے خبر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم
یار بے خبر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم
اچھے یا بُرے ہو تم
میرے توجگر ہو تم
تم ہی شام ہو میری
اور مری سحر ہو تم
ڈرتا ہوں جدائی سے
پاس میں مگر ہو تم
جستجو ہے منزل کی
میری تو ڈگر ہو تم
ہو قریب دل سے بھی
ہاں جی ہاں جگر ہو تم
آؤ میری نیندو میں
میرے خواب گر ہو تم
تھی تلاش جس در کی
وہ حسین در ہو تم
تیرا میرا کیا رشتہ
میرے تو نگر ہو تم
آفتاب میرے ہو
یا مرے قمر ہو تم
جان میری تم ہی ہو
بس تمام ذر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم
یار بے خبر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم 

(محمد بشیر مہتاب)                                               

Comments

POPULAR POSTS:

Gazal -Bachpann / غزل - بچپن

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

Haseen Dil Ruba Chandni Gulbadan Hai / حسیں دلربا چاندنی گل بدن ہے

Sab ki mojudgi samjhta hai/ سب کی موجودگی سمجھتا ہے