Posts

Zulmat Say Aik Roz Ujaalay Mein Aa Gaye / ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آگئے

ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آ گئے جب دھوپ نے ستایا تو سائے میں آ گئے
zulmat say aik roz ujaalay mein aa gaye jab dhoop ne sataaya to saaye mein aa gaye
خوابوں کا خانہ ڈھ گیا ہم کچھ نہ کر سکے دو چار اشک تھے وہ بھی  ملبے میں آگئے
KHwaaboon ka KHaana Daeh gaya hum kuch na kar sakay do chaar ashk thay woh bhi malbay mein aa gaye
جب تذکرہ ہوا ہے شکستہ  وفاؤں کا   کچھ میرے ساتھ آپ بھی  قصے میں آگئے 
jab tazkira huwa hai shikasta wafa’ouN ka kuch mere saath aap bhi qissay mein aa gaye
تب  کون سی گھڑی تھی وہ ہائے بُری گھڑی "ہم اک حسیں بہار کے دھوکے میں آ گئے"
tab kon si ghaDhi thi woh haa’ye buri ghaDhi hum ek hasee.n bahaar kay dhokay mein aa gaye
خوشیاں تو میری راہ سے یکدم گزر  گئیں دکھ بے شمار تھے مرے حصے میں آگئے
kHushyaa.n to meri rah se yakdam guzar gay’eeN dukh be-shumaar thay mere hissay mein aa gaye
صورت کوئی نکلنے کی آئی نہیں نظر ہم بد نصیب جب ترے گھیرے میں آگئے
soorat koi nikalnay ki aayi nahi.n nazar hum bad-naseeb jab tere gheray mei.n aa gaye
Bashir Mehtaab بشیر مہتاب

Bohot Aasaan Hai Ek Dusray Ka Ho Jana / بہت آسان ہے اک دوسرے کا ہو جانا

بہت آسان ہے اک دوسرے کا  ہو جانا پیار کا حد سے گزرنا ہے جدا ہو جانا
bohot aasaan hai ek dūsray ka ho jana pyaar ka hadd se guzarna hai juda ho jana
یہ تو تقدیر نے کھیلا ہے مرے جذبوں سے ورنہ دشوار نہ تھا اس کا مرا ہو جانا
ye to taqdeer ne khela hai mere jazboo.n se warna dushwaar na tha uss ka mera ho jana
میں تو مفلس ہوں مرے پاس ہنر کوئی نہیں ذرد پتے کی تمنا ہے ہرا ہو جانا
mein to muflis hoo.n mere paas hunar koi nahi zard pattay ki tamanna hai hara ho jana
اس جگہ آ کے یہ معلوم ہوا ہے مجھ کو کتنا مشکل ہے بلندی پہ کھڑا ہو جانا
iss jagah aa kay ye ma’loom huwa hai mujh ko kitna mushkil hai bulandi pe khaDha ho jana
لوگ جینے کے لئے کیا نہیں کرتے مہتاب پر سمجھ آیا نہ  تیرا  یوں فنا ہو جانا
log jeenay ke liye kya nahi kartay mehtaab par samajh aaya na tera yū.n fana ho jana
Bashir Mehtaab بشیر مہتاب

Naye Lamhaat Ko Roshan Banana Chahta HooN / نئے لمحات کو روشن بنانا چاہتا ہوں

نئے لمحات کو روشن بنانا چاہتا ہوں میں ہاتھوں کی لکیروں کو مٹانا چاہتا ہوں
اُسے  پاکر اُسے پھر سے گنوانا چاہتا ہوں میں  اپنے دل کی ہمت آزمانہ چاہتا ہوں
کھلی آنکھیں مجھے سپنے دکھایا کرتی ہیں جو وہ سپنے ایک دن سچ کر دکھانا چاہتا ہوں
رہے اجداد کی زندہ روایت اس لئے میں بڑی چاہت سے اک تختی بنانا چاہتا ہوں
جہاں اس دور کی الفت کو دفنایا گیا ہے وہاں میں ایک دو آنسوں بہانا چاہتا ہوں
- بشیرمہتاب
naye lamhaat ko roshan banana chahta hoo.n mei.n haatho.n ki lakeero.n ko mitaana chahta hoo.n
usay paakar usay phir say ganwana chahta hoo.n mei.n apnay dil ki himmat aazmaana chahta hoo.n
khuli aankhei.n mujhay sapnay dikhaya karti hai.n jo wo sapnay aik din sach kar dikhaana chahta hoo.n
rahay ajdaad ki zinda rawayat iss liye mei.n baDi chahat say ik taKHti banaana chahta hoo.n
jahaa.n iss dor ki ulfat ko dafnaya gaya hai waha.n mei.n aik do aansoo.n bahaana chahta hoo.n
- Bashir Mehtaab

AerooN GerooN Ko Bojh Lagtay Hai / ایروں، غیروں کو بوجھ لگتے ہیں

ایروں، غیروں کو  بوجھ لگتے ہیں جانے کتنوں کو بوجھ لگتے ہیں
آپ اِس اُس  کی بات ہی نہ کریں ہم تو  اپنوں کو  بوجھ لگتے ہیں
ہے یہی رونا   اب گلستاں کا پھول کلیوں کو بوجھ لگتے ہیں
ایک مدت سے میں نہیں سویا خواب آنکھوں کو بوجھ لگتے ہیں
اُگ چکے ہیں ہمارے جسموں پر  سر! جو تکیوں کو بوجھ لگتے ہیں
آپ سے ایک پل نہیں کٹتا ہم تو گھنٹوں کو بوجھ لگتے ہیں
جانتا ہوں  کہ  آج  میرے  قدم تیری گلیوں کو  بوجھ لگتے ہیں
ایک  آنگن  میں رہنا مشکل ہے رنگ پھولوں کوبوجھ لگتےہیں
 کیسے کوئی غزل  کہے مہتاب غم بھی لفظوں کو بوجھ لگتے ہیں
ـــــــــــ۔ بشیر مہتاب  ــــ AerooN  gerooN ko bojh laghtay hain jaanay kitnooN ko bojh laghtay hain
aap iss uss ki baat hi na kareN  hum to apnooN ko bojh laghte hain
hai yehi rona ab gulistaan ka phool kaliyooN ko bojh laghte hain
eik mudat se mai nhi sooya  Khawab ankhooN ko bojh lghte hain
ugg chukay hain hamarey jismooN par sarr! jo takyooN ko bojh laghte hain
aap se eik pall nhi kaT-ta hum to ghenTooN ko bojh laghte hain
jānta hu ki aaj mere qadam teri ghalyooN ko bojh laghte hain
eik aanghan mai rehna mushqil ha…

Jis Tarah Tum Ne Chalaya Mujh Ko / جس طرح تم نے چلایا مجھ کو

جس طرح تم نے چلایا  مجھ کو  کون دیتا یہاں رستہ مجھ کو 
عجب  آواز تھی ان آنکھوں کی کیسے کیسے نہ پکارا مجھ کو 
اپنی پہچاں یوں  بنائی تم نے سب کی نظروں میں گرایا مجھ کو 
زندگی بھر کا تعلق توڑا خوب آئینہ دکھایا مجھ کو 
نا خدا ڈوب چکا ہے میرا کیسے حاصل ہو کنارہ مجھ کو
میرا دل بھی ہے یہ دلی کی طرح جو  بھی آیا یہاں  لوٹا مجھ کو 
یہ بھی اک خاص ہنر مندی ہے تم نے جس آنکھ  سے دیکھا مجھ کو 
ایک مہتاب مجھے جانتا ہے اور کس نے یہاں جانا مجھ کو 
- بشیر مہتاب
jis tarha tum ne chalaya mujh ko kon deta yahaañ rassta mujh ko
ajab aawāz thi un ānkhoñ ki  kaise kaise na pukāra mujh ko
apni pehchaañ yuñ banayi tum ne sab ki nazrōñ meiñ giraya mujh ko
zindagi bhar ka ta'aluq toda khoob aayiena dikhaya mujh ko
na-khuda Doob chuka hai mera kese haasil ho kinara mujh ko
mera dil bi hai ye dilli* ki tarha jo bi aaya yahaañ loota mujh ko 
ye bhi ek khaas hunar mandi hai tum ne jis aankh se dekha mujh ko
aek mehtaab mujhay jānta hai aur kis ne yahāñ jāna mujh ko
- Bashir Mehtaab
(*dilli = Delhi)

Watan / وطن

پیارے  وطن تری  قسم ! ایسا  کریں گے ہم اب آنے والوں کے لئے رستہ کریں گے ہم 
 اے ملک ہم کو تجھ سے محبت  ہے بے شمار  تیرے ہر ایک ذرّے کی رکشا  کریں گے ہم 

ذرخیز یہ زمیں ہے شہیدوں کے خون سے جذبات یہ ہیں  جان بھی  وارا کریں گے  ہم 

ہم کو  ترنگا اپنا ہمیشہ عزیز تھا جب تک رہیں!  بلند یہ جھنڈا کریں گے ہم 

دیکھو نہ اس چمن کو سیاست  کی آنکھ سے ہر گز  نہ ایسی آنکھ  گوارا کریں گے 
  جو زندگی وطن کی حفاظت نہ کر سکے  تو ایسی زندگی  سے کنارہ  کریں گے ہم 

ہم فوجی ہیں بس ایک ہی وعدے پہ جیتے ہیں  جب تک جئیں گے دیش کی رکشا  کریں گے ہم 
- بشیرمہتاب

pyaare watan teri qasam aesa karei’N ge hum ab aane wālu ke liye rassta karei’N ge hum
ae mulk hum ko tujh se muhabbat hai be-shumār tere har eik zarrey ki raksha karei’N ge hum 
zarKHaiz ye zamee’N hai shahēdoo’N ke khoon se jazbāt ye hain jaan bi waara karei’N ge hum
hum ko tiranga apna hamesha azeez tha jab tak rahei'N! buland ye jhanDa karei’N ge hum
dekho na is chaman ko siyāsat ki aankh se harr giz na aesi aankh gawāra karei’N ge hum
jo zindgi watan ki hifāzat na karsake to a…

BooDhi Za’eef Aajiz Sochay Nikaal Kar / بوڑھی ضعیف عاجز سوچیں نکال کر

بوڑھی ضعیف عاجز سوچیں نکال کر
وہ چل رہے  ہیں اپنی روحیں نکال کر

جس شہر ہم گئے وہ اندھوں کا شہر تھا 
ہم نے بھی رکھ دیں اپنی آنکھیں نکال کر

دریا کو ہے  سمندر کی خامشی پسند 
دریا بھی بہہ رہا ہے موجیں نکال کر

دل کا  کوئی تعلق اُن سے ضرور تھا 
جو چل دئے ہیں دل کی  تاریں نکال کر 

مہتاب کوچہء دل   روحِ خیال سے
  آساں نہیں ہے لانا  غزلیں نکال کر

بشیر مہتاب

booDhi za’eef aajiz sochay nikaal kar
woh chal rahay hai apni rūheiñ nikaal kar

jis shehar hum gaye woh andhuñ ka shehar tha
hum nay bhi rakh di apni aankheiñ nikaal kar

darya ko hai samandar ki khaamshi pasand
darya bhi beh raha hai moujaiñ nikaal kar

dil ka koi ta’luq unn se zaroor tha
jo chal diye hai dil ki taarey nikaal kar

Mehtaab kocha’ dil rooh-e-khayal say
aasaañ nahiñ hai laana gazleiñ nikaal kar

Bashir Mehtaab

Asifa / آصفہ

زمیں رو رہی آسماں رو رہا ہے
ترے غم میں سارا جہاں رو رہا ہے 

Zameeñ ro rahi āsmāñ ro raha hai
Tere gamm maiñ sāra jahāñ ro raha hai

صدا آ رہی آصفہ آصفہ کی 
 ترے حال پر یہ زماں  رو رہا ہے

Sadha aa rahi Aasifa Aasifa ki
Tere haal par ye zamāñ ro raha hai

کہاں لے گئی تجھ کو فرقہ پرستی 
ترا ایک اک مہرباں رو رہا ہے 

Kahāñ lay gayi tujh ko firqa parasti
Tera aek ek mehrabāñ ro raha hai

کہیں پھول آئے کہیں پھول بکھرے
تمہارے لئے  گلستاں رو رہا ہے 

Kaheeñ phool aaye kaheeñ phool bikhray
Tumharay liye gulsitāñ ro raha hai

یہ کیسا چنا ہے گلِستاں کا مالی 
یہ پھولوں کے غم میں کہاں رو رہا ہے 

Ye kaisa chuna hai gulistaa’N ka maali
Ye phoolūñ kay gham meiñ kahāñ ro raha hai

ترے حال پر رحم آیا  نہ اُن کو
مرے دل  سے اُٹھتا دھواں رو رہا ہے 

Tere haal par reham aaya na un ko
Mere dil se uth’ta dhuwāñ ro raha hai

عذاب آ نہ جائے کہیں آسماں سے
ترے دکھ میں بچہ ، جواں رو رہا ہے

Azaab aā na jāye kaheeñ āsmāñ say
Tere dukh meiñ bacha, jawāñ ro raha hai

بشیرمہتاب
BashirMehtaab

Sab ki mojudgi samjhta hai/ سب کی موجودگی سمجھتا ہے

سب کی موجودگی سمجھتا ہے
دل! کسی کی کمی سمجھتا ہے
Sab ki mojūdgi samjhta hai
dil kisi ki kami samjhta hai
ایک ہی شخص سے میں واقف ہوں
جو مجھے اجنبی سمجھتا ہے
aik hi shakhs se mai waqif hu
jo mujhy ajnabi samjhta hai

گو مجھے جانتا نہیں لیکن
وہ مری شاعری سمجھتا ہے
go mujhy jaanta nhi lekinwo meri shayari samajhta hai
وصل کے اشک! ہجر کے آنسو وہ نمی کو نمی سمجھتا ہے
wasl ke ashk! Hijr ke ānsoo
wo nami ko nami samjhta hai
وہی میری زباں سے ہے واقف
جو مری خامشی سمجھتا ہے
wo hi meri zubāñ se hai waqif
jo meree khāmshi samjhta hai
آپ کے سامنے میں خوش ہوں مگر
میرے دکھ! "رام" ہی سمجھتا ہے 
aap ke sāmnay mai khush hu magar
mere dukh! “Raam” hi samjhta hai
یہی اردو زباں کا ہے جادو
اب مجھے  ہر کوئی سمجھتا ہے
yehi urdu zubāñ ka hai jaadu
ab mujhay harr koi samjhta hai
میں اُسے بات دل کی کہتا ہوں
وہ اِسے شاعری سمجھتا ہے
maiñ usay baat dil ki kehta huñ
wo isay shayari samjhta hai
اتنا نادان بھی نہیں ہے وہ
جو تمہاری ہنسی سمجھتا ہے
itna nadaan bi nahi hai wo
jo tumhari hansi samjhta hai
کون مہتا…

Jab Se Mere Raqeeb Ka Rassta Badal Gaya / جب سے مرے رقیب کا رستہ بدل گیا

جب سے مرے رقیب کا رستہ بدل گیا
تب سے مرے نصیب کا نقشہ بدل گیا

شیریں تھا کتنا  آپ کا  اندازِ گفتگو
دو چار سکے آتے ہی لہجہ بدل گیا

کس کی زبان سے مجھے دیکھو خبر مجھے
کیسے مرے حریف کا چہرہ بدل گیا

اُن کے بدلنے کا مجھے افسوس کچھ نہیں
افسوس یہ ہے اپنا ہی سایہ بدل گیا

جب سے بڑوں کی گھر سے حکومت چلی گئی
جنت  نما مکان کا   نقشہ بدل گیا

راہوں کی خاک چھانتا پھرتا ہوں آج تک
"رہبر بدل گیا کبھی رستہ بدل گیا"

کہتاہے اسکےجانے سے کچھ بھی نہیں ہوا
 مہتاب ..جبکہ دل کا وہ ڈھانچہ بدل گیا

بشیر مہتاب

Baaqi Raha Hai Kya Dil-e-Khaana Kharaab Mai'N / باقی رہا ہے کیا دلِ خانہ خراب میں

باقی رہا ہے کیا دلِ خانہ خراب میں
ہستی بھی مبتلا ہے مسلسل عذاب میں

سب ختم ہو چکا ہے تو اس پر سوال کیا
ہے میرے پاس کیا جو لکھوں گا جواب میں

ہوش  و حواس کھو گیا کیسے میں سب تمام
"ساقی نے کچھ ملا نہ دیا ہو شراب میں"

صورت تمام شہر میں اس سے نہیں ملی
جو شخص رات بھر نظر آتا ہے خواب میں

مہتاب اب کی بار تو ان کا قصور ہے
یہ سوچتا ہوں کیا وہ کہیں گے جواب میں
بشیر مہتاب

Jo Kehta Tha Tum Bin Guzaara Nahi'N Hai / جو کہتا تھا تُم بن گزارا نہیں ہے

جو کہتا تھا تُم بن گزارا نہیں ہے
وہی شخص دیکھو ہمارا نہیں ہے

کبھی ہم کو ہم سا ملا ہی نہ ساتھی
 کبھی ہم نے خود کو  سنوارا نہیں ہے

سبھی کو دلاسے دیا کرتا تھا جو
اُسی کا کوئی اب سہارا نہیں ہے

حسیں ہوتی ہے وہ خوابوں کی دنیا
کہ اس پر کسی کا اجارا نہیں ہے

میں نفرت کو الفت پڑھانے چلا ہوں
مرے حق میں کوئی ستارہ نہیں ہے

وہ اک عمر سے چل رہا ہے مسلسل
وہ تھک تو چکا پر وہ ہارا نہیں ہے

ترے غم کے دفتر پڑھے کون مہتاب
یہاں کون رنجوں کا مارا نہیں ہے

بشیر مہتاب
jo kehta tha tum bin guzaara nahi hai
wohi shakhs dekho hamara nahi hai
kabhi hum ko hum sa mila hi na sathi
kabhi hum ne khud ko sanwara nahi hai
sabhi ko dilasey diya karta tha jo
usi ka koi ab sahara nahi hai  
haseen hoti hai wo khawaboo'N ki duniyaa'N
ke us par kisi ka ijara nahi hai
mai nafrat ko ulfat padhaney chala hu
mere haq mai koi sitara nahi hai 
wo ek umar se chal raha hai musalsal
 wo thhak to chuka par wo haara nhi hai
tere ghum ke daftar padhey kon Mehtaab
yahaan kon rannju ka maara nahi hai
Bashir Mehtaab

Zulmat Se Aik Roz Ujaalay Mai'N Aa Gaye / ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آ گئے

ظلمت سے ایک روز اُجالے میں آ گئے
جب دھوپ نے ستایا تو سائے میں آ گئے

خوابوں کا خانہ ڈھ گیا ہم کچھ نہ کر سکے
دو چار اشک تھے وہ بھی  ملبے میں آگئے

جب تذکرہ ہوا ہے شکستہ  وفاؤں کا
  کچھ میرے ساتھ آپ بھی  قصے میں آگئے

تب  کون سی گھڑی تھی وہ ہائے بُری گھڑی
"ہم اک حسیں بہار کے دھوکے میں آ گئے"

خوشیاں تو میری راہ سے یکدم گزر  گئیں
دکھ بے شمار تھے مرے حصے میں آگئے

صورت کوئی نکلنے کی آئی نہیں نظر
ہم بد نصیب جب ترے گھیرے میں آگئے
بشیر مہتاب

Koi Uss Se Gila Nahi Hota / کوئی اس سے گلہ نہیں ہوتا

کوئی اس سے گلہ نہیں ہوتا
وہ اگر بے وفا نہیں ہوتا

 میری نظروں سے دور رہتا ہے
وہ جو دل سے جدا نہیں ہوتا

دو مجھے اور درد دو صاحب
درد جب تک دوا نہیں ہوتا


جس کی ثابت  جڑیں نہیں ہوتی
وہ شجر بھی ہرا نہیں ہوتا

ماں کا احسان ایسا ہے پیارے
جو کبھی بھی ادا نہیں ہوتا


پیار ہر وقت ہر گھڑی بانٹو
زندگی کا پتہ نہیں ہوتا

ایک مفلس نے یہ کہا ہم سے
مفلسوں کا خدا نہیں ہوتا؟

 جانے کیسے قفس میں ہے مہتاب
ہائے اک پل  رہا نہیں ہوتا
بشیر مہتاب

Rukh Tumhaara Ho Jidhar Hum Bhi Udhar Ho Jaaye'N Ge / رخ تمہارا ہو جدھر ہم بھی اُدھر ہو جائیں گے

رخ تمہارا ہو جدھر ہم بھی اُدھر ہو جائیں گے
تم سے بجھڑینگے اگر تو دربدر ہو جائیں گے

زندگانی کے سفر میں لطف تب ہو گا نصیب
"ہم خیال و ہم نوا جب ہمسفر ہو جائیں گے"

آسمانوں کا سفر ہم طے کریں گے ایک روز
جب ہمارے حوصلوں میں بال و پر ہو جائیں گے

سادگی یوں ہی اگر لادے رہےتو ایک دن
سب تمہارے  اپنے تم سے بے خبر ہو جائیں گے


دیکھنا جس دن انہیں مقصد سمجھ میں آئے گا
منزلوں کی جستجو میں رہ گزر ہو جائیں گے


پودے ہیں اردو ادب کے آب و دانہ ڈالئے
آنے والے کل میں سائے اور ثمر ہو جائیں گے


ساقی ساغر کی ضرورت ہے کہاں میرے لئے
تیری آنکھوں کےہی پیالے پراثر ہو جائیں گے

وہ نہ جائیں گے کبھی مہتاب ظلمت کی طرف
وقت پر انجام سے واقف اگر ہو جائیں گے
بشیر مہتاب

Kis Masti Mai'N Ab Rehta Hoo'N / کس مستی میں اب رہتا ہوں

کس  مستی  میں اب  رہتا ہوں
خود کو خود میں ڈھونڈ رہا ہوں

دنیا میں سب سے ہی جدا ہوں
آخر  میں کس   دنیا   کا   ہوں

میں توخود کو بھول چکا ہوں
تم  بتلا دو  کون  ہوں کیا ہوں

یہ بھی نہیں ہے یاد مجھےاب
کیوں   آخر  روتا   رہتا    ہوں

اک   دنیا    ہے    میرے    اندر
 اس میں ہی میں گھوم رہا ہوں

مجھ کو نیند ہے پیاری یا پھر
اُس کوبھی میں ہی پیارا ہوں

وہ  رخ  اپنا  پھیر  چکے  ہیں
میں کس  کو  اپنا  کہتا  ہوں

ان  لفظوں نے منزل   چھینی
آپ چلیں.. میں بھی  آتا ہوں

من تو خوشیاں  بانٹ رہا ہے
میں قطرہ  قطرہ   روتا ہوں

خودکابوجھ ہےکتنا خود  پر
کتنا خود کو جھیل  رہا ہوں

مجھکوتم مہتاب نہ سمجھو
شاید  میں  اس کا  سایا ہوں
بشیر مہتاب

Hum Agar Unn Se Darr Gaye Hotey / ہم اگر اُن سے ڈر گئے ہوتے

ہم اگر اُن سے ڈر گئے ہوتے
دل کے دیوار و در گئے ہوتے

پگڑیاں گر نہیں گئی ہوتی
تو یقینً تھا سر گئے ہوتے

 دشمنِ جاں نے زندگی بخشی
"اس سے اچھا تھا مر گئے ہوتے"

ہم کو تم سے ہی پیار تھا ورنہ
کتنے آئے قمر گئے ہوتے

وقتِ ہجراں میں شہرِ جاناں سے
کاش ہم  بے خبر گئے ہوتے

آپ کے ساتھ ساتھ چلتے اگر
منزلوں تک سفر گئے ہوتے

ہم جو ہوتے وفاؤں کے پیکر
نفرتوں کے جگر گئے ہوتے

اب بھی کھلتی اگر نہ تیری زبان
جانے کتنے ہی سر گئے ہوتے

ہوتے انجامِ عشق سے واقف
اپنی اپنی ڈگر گئے ہوتے
(بشیر مہتاب)

Aaye Thay Tabassum Liye Huwe / آئے تھے تبسم لئے ہوئے

آئے تھے تبسم لئے ہوئے بزم سے چلے غم لئے ہوئے

نفرتیں مٹانے چلے ہیں ہم
چاہتوں کا پرچھم لئے ہوئے

رنج کی دوا  کوئی  اے خدا
آئے ابنِ مریم لئے ہوئے

یاد ہے وہ دن!  بے وفائی کا؟
دیر تک  تھا پرنم لئے ہوئے

دے مری خطا کی جو  ہو سزا
میں کھڑا ہوں سر خم لئے ہوئے

کب سے ہوں میں اس انتظار میں
آؤ گے خوشی تُم لئے ہوئے

 کٹ رہی ہے  مہتاب زندگی
 یاد اُن  کی  پیہم لئے ہوئے
(بشیر مہتاب)

Deta Raha Mei'N Gamm Ki Dehai'e Tamaam Shabb / دیتا رہا میں غم کی دہائی تمام شب

دیتا رہا میں غم کی دہائی تمام شب 
اس بے وفا کو شرم نہ آئی تمام شب

 بدلا نہ دل ذرا بھی وہ کامل یقین تھا
چغلی مرے رقیب نے کھائی تمام شب

کچھ تزکرہ سا شام کو جو آپ کا ہوا
"مجھ دل زدہ کو نیند نہ آئی تمام شب"

دیئے  کہیں جلائے ترے انتظار میں
صورت نہ تو نے اپنی دکھائی  تمام شب

یوں قید کر لیا  مجھے صیاد نے کہ میں
بس مانگتا تھا اس سے  رہائی تمام شب

مہتاب تیرے پیار میں کوئی کمی تو ہے
جس پیار نے وہ آنکھ رُلائی تمام شب

(بشیر مہتاب)

Ahle Sarowat Ka Agar Jurum Ujaagar Hoga / اہلٍ ثروت کا اگر جرم اجاگر ہوگا

اہلٍ  ثروت  کا  اگر  جرم  اجاگر ہوگا
مجھ کو معلوم ہے الزام مرے سر ہوگا

جس طرح مجھ کو رلایا ہے ستمگر تونے
تو بھی روئے گا تو انصاف برابر ہوگا

جانے پہچانے نظر آتے ہیں سارے چہرے
 بام و در دیکھ لے شاید یہ ترا گھر ہوگا

آج اسی شخص نے چھینی ہے ہنسی پھولوں کی
وہ جو کہتا تھا کہ آنگن میں صنوبر ہو گا

میں نہ  رکھتا ترے قدموں میں کبھی سر اپنا
مجھ کو معلوم اگر ہوتا تو پتھر ہو گا

جو نہیں جانتا مہتاب وفا کے معنی
شاذ ہی مہر و مروت کا وہ خوگر ہوگا
(بشیر مہتاب)

Jabb Se Nikili Hai Roshni Humse / جب سے نکلی ہے روشنی ہم سے

جب سے نکلی ہے روشنی ہم سے
بغض رکھتی ہے تیرگی ہم سے

جب ہو فن میں محیط خونِ جگر
پھر نکلتی ہے شاعری ہم سے

دوستی ہم نبھاتے ہیں بھرپور
دیکھ لو کر کے دوستی ہم سے

جب وہ ائے تو قید کر لینا
بھاگ جائے نہ پھر خوشی ہم سے

آج نکلے اگر خفا ہو کر
بات کرنا نہ پھر کبھی ہم سے

ہم نے تنہا کیا تمام سفر
کیوں کھٹکتی ہے رہبری ہم سے

سچ ہے کہ ہم کلام ہوتی ہیں
بلبلیں بھی کبھی کبھی ہم سے

جب کہ الفت بھی ہم سے کرتے ہو
پھر یہ کیوں اتنی بے رخی ہم سے

جانتے ہیں ترا اے جانِ حیات
اک تعلق ہے باہمی ہم سے

کوئی تو بات ہو گی اے مہتاب
کیوں خفا سی ہے زندگی ہم سے
(بشیر مہتاب)

Teri Aankhu'N Ne To'h Tafreeq Ke Manzarr Dekhay / تیری آنکھوں نے تو تفریق کے منظر دیکھے

تیری آنکھوں نے تو تفریق کے منظر دیکھے
میری نظروں نے سبھی لوگ برابر دیکھے

کوڑیوں میں بھی بکاکرتے ہیں  انساں کے وجود
اجرتِ خاص میں بکتے ہوئے پتھر دیکھے

کوئی سپنا کوئی افسانہ نہیں ہے یارو
ہم نے کانٹوں پہ بھی بچھتے ہوئے بستر دیکھے

وعدے برسوں کے ارے توڑے گئے پل بھر میں
دلِ نازک پہ بھی چلتے ہوئے خنجر دیکھے

اپنے یاروں سے محبت کا صلہ مت مانگو
ہم نے یاروں کے بدلتے ہوئے تیور دیکھے

نفرتیں بانٹتے پھرتے ہیں جو انسانوں میں
لوگ ایسے بھی ترے شہر میں اکثر دیکھے

میں ہی یادوں میں بہت زیر ہوا جاتا ہوں
ان کے حالات مگر پہلے سے بہتر دیکھے
(بشیر مہتاب)

Tere Haatho'N Parr Likhey Thay Mein Ne Kuch Paryoo'N Ke Naam / تیرے ہاتھوں پر لکھے تھے میں نے کچھ پریوں کے نام

تیرے ہاتھوں پر لکھے تھے میں نے  کچھ پریوں کے نام
میرے ہاتھوں پر لکھے تھے تم نے کچھ  پھولوں کے نام

دیر تک باتیں ہوئیں آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر
رات میں نے اک غزل لکھی ہے اُن آنکھوں کے نام

ہم نے سپنے میں جو دیکھا تھا وہ  صحرا اور پیڑ
یاد ہے  وہ خواب لکھے تھے وہاں دونوں کے نام

کیسے ممکن تھا کہ آتے  آشیاں جلنے کے بعد
میری پیشانی پہ لکھے تھے مرے  اپنوں کے نام

جو ہمارے درمیاں تھا تیری میری بات تھی
جب حقیقت سامنے آئی کُھلے غیروں کے نام

اک نظر  دیکھا تو  اظہارِ محبت کر دیا
داغِ فرقت دے گیا مہتاب جو برسوں کے نام
(بشیر مہتاب)

Ye Kon Aagaya Hai Ye Kaisi Bahaar Hai / یہ کون آگیا ہے یہ کیسی بہار ہے

یہ کون آگیا ہے یہ کیسی بہار ہے
کافی دنوں سےقلب مرا خوشگوار ہے

میں اس لئے بھی دور سیاست سے رہتا ہوں
اس کی لگائی آگ حدوں سے بھی پار ہے
چاہت کی بات کرتےہونفرت کےشہر میں
 چھوڑو یہاں تو جھوٹ پہ دارومدار ہے

آنکھیں تجھی کو ڈھونڈ رہی ہیں گلی گلی
دل میں تری تڑپ ہے لبوں پر پکار ہے

شعروسخن کی بات جوکرتےہیں رات دن
ان میں ادب تو کم ہے حسد بے شمار ہے

مہتاب تیرےشہرساکوئی نہیں ہےشہر
رغبت دلوں میں سب کے ہے آپس میں پیار ہے
(بشیر مہتاب)

Hairat Hai Mera Ghearay Huway Raasta Hai Kon / حیرت ہے میرا گھیرے ہوئے راستا ہے کون

حیرت ہے میرا گھیرے ہوئے  راستا ہے کون
اس شہرمیں نیاہوں مجھےجانتا ہے کون ہوئے
گھر سے الگ  ہوئے ہیں تو معلوم یہ ہوا
لوگو ! کسی کےحق میں یہاں  سوچتا ہے کون

 گھر آج بھی اُجڑتے ہیں ویران ہوتے ہیں
سب کھیل دیکھتے ہیں،مگر بولتا ہے کون

غفلت کی نیند سوئے ہیں سب جانتا ہوں میں
لیکن مرے جگانے سےبھی جاگتا ہے کون

کوئی تو  میرا  سامنا  کرتا  ہے  بار  بار
ورنہ یہ بام و در سے اِدھرجھانکتا ہے کون

مہتاب تیرے اپنے  پرائے ہوئے تمام
 اب جانتے ہیں سب تجھے پہچانتا ہے کون (بشیر مہتاب)

Uljhan Si Hai Dhadkan Main / الجھن سی ہےدھڑکن میں

الجھن سی ہےدھڑکن میں
 کتنے درد  ہیں جوبن میں

ایسا بندھا ہوں بندھن میں
 دل  جلتا  ہے  ساون  میں

 اپنے  چہرے   کو   دیکھو
عیب نہ ڈھونڈو درپن میں

کون  پرندوں  کو   دیکھے
آگ   لگی   ہے  گلشن  میں

اب  تو  بھ

Maa Ho Raazi To Khuda Bhi Meharbaa'n Hojayega / ماں ہو راضی تو خدا بھی مہرباں ہو جائے گا

ماں ہو راضی تو خدا بھی مہرباں ہو جائے گا
دھوپ میں بھی تیرے سر پر سائباں ہو جائے گا

سامنے آیا نہ کر جب میں کہانی لکھتا ہوں
تیرا قصہ لکھتے لکھتے داستاں ہو جائے گا

اُس کی سوچیں مختلف ہیں اور دل میں اک جنون
وہ اگر بڑھتا رہے گا  آسماں ہو جائے گا

ایک بندہ ایک ہی پودا لگائے روز اگر
اک نہ اک دن شہر اپنا گلستاں ہو جائے گا

مال و دولت کچھ نہیں ہے یہ  یقیں ہو جائے تو
ماندِ ست یگ کے اپنا یہ جہاں ہو جائے گا

تم اکیلے ہی چلو گے جانبِ  منزل اگر
لوگ آ تے جائنگےاور کارواں ہو جائے گا

بار بار اپنی صفائی دو نہ  اُس کے سامنے
ایسی باتوں سے وہ کافر بد گماں ہو جائے گا

 اشک تیری آنکھوں سے باہر نہ آئیں گے اگر
آخرش مہتاب تیرا غم نہاں ہو جائے گا (بشیر مہتاب)

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا
ایفائے  وعدہ  کو  کوئی وعدہ نہیں رہا

اشکوں سے کیسے درد کو ظاہر کرینگے ہم
آنکھوں میں اب تو ایک بھی قطرہ نہیں رہا

پہلے تو ہوتا تھا مرا چرچا گلی گلی
شاید یہ شہرِ غیر ہے چرچا نہیں رہا

ارمان پورے ہو کے بھی جذبات رہ گئے
"کشتی ہوئی نصیب تو دریا نہیں رہا"

اک بار میرے چاکِ گریباں پہ کر نظر
تیرا  تو  در  کنار  میں اپنا نہیں رہا

 اب مت پکار اُس کو دلِ بے قرار تو
کر لے مرا  یقین  وہ  تیرا  نہیں  رہا

کیاجانےکیوں انہیں بھی کھٹکنے لگا ہوں میں
کیوں اُن کے گھر میں میرا بسیرا نہیں رہا

ان کی نگاہِ ناز کا یہ بھی ہے ایک رنگ
جیسامیں پہلےرہتا تھا ویسا نہیں رہا

(بشیر مہتاب)

Mere Qareeb Se Jab Meharbaa'n Rawaana Huwa / مرے قریب سے جب مہرباں روانہ ہوا

مرے قریب سے جب مہرباں روانہ ہوا
زمیں کھسک گئی اور آسماں روانہ ہوا

وہ  میرا گھر مرے اجداد  کی نشانی تھی
لگا کے آگ  جسے کارواں روانہ ہوا

ذرا سی دیر سنی ہوتی گفتگو میری
مرے خلاف لئے کیوں گماں روانہ ہوا

ہم ایک ساتھ رہیں گے کیے تھے قول و قرار
بنا کے مجھ کو تُو مجنوں کہاں روانہ ہوا

خموش رہتے ہو کیوں بار بار کہتا تھا
 وہ سن کے درد بھری داستاں روانہ ہوا

غمِ جدائی اب اک پل سہی نہیں جاتی
الٰہی مجھ کو بتا وہ کہاں روانہ ہوا

وہ جس کو خود سے لڑائی لڑی نہیں جاتی
اُٹھا کے کاندھوں پہ تیرو کماں روانہ ہوا

خدا ہمیشہ سلامت رکھے اُسے مہتاب
سکھا کے تجھ کو جو  اردو زباں روانہ ہوا
(بشیر مہتاب) Mere Qareeb Se Jab Meharbaa'n Rawaana Huwa Zamee'n Khisakhh Gaye Aur Aasmaa'n Rawaana Huwa  Woh Mera Ghar Mere Ajdaad Ki Nishaani Thi Laga Ke Aag Jisey Kaarvaa'n Rawaana Huwa Zara Si Daer Suni Hoti Guf'tugu Meri Mere Khilaaf Liye Kyu'n Gumaa'n Rawaana Huwa Hum Aik Saath Rahenge Kiye Thay Qoul-o-Qaraar Bana Key Mujh Ko Tu Majnu'n Kahaa'n Rawaana Huwa Khamosh Rehte Ho Kyu'n Baar Baar Kehta Tha Woh Sunn Ke…

Husn Woh Ba'Kamaal Ho Jaise / حسن وہ با کمال ہو جیسے

حسن  وہ  با کمال  ہو جیسے
 آنکھ مثلِ غزال ہوجیسے

کہتے کہتے وہ  رک  گئے فوراً
لب پہ  کوئی سوال ہو جیسے

وہ مجھے دیکھتے رہے اس طرح
دل میں شوقِ وصال  ہو جیسے

شہربھرمیں اےمیری جانِ حیات
اک  تو  ہی بےمثال ہو جیسے

دوستی میں ملا دغہ مجھکو
الفتوں  کا  زوال  ہو   جیسے

گم سا ہو جاتا ہوں خیالوں میں
بس اُسی کا  خیال ہو جیسے

ہم سے پوچھو  نہ ہجر کی باتیں
ایک  پل  ایک  سال  ہو جیسے

ہم   کبھی  ایک ہو نہیں سکتے
خواب ہی اب وصال ہو جیسے

اس طرح  دیتا  ہوں اسے آواز
زندگی  کا  سوال  ہو   جیسے

ریزہ  ریزہ  ہوا  ہے دل میرا
کوئی  آیا  زوال  ہو  جیسے

اسکےاشکوں سے ہوتاہےاظہار
فرقتوں  کا  ملال  ہو  جیسے

کہہ رہا ہے یہ دل  ترا مہتاب
اب  تو  جینا وبال ہو جیسے
(بشیر مہتاب)

Haseen Dil Ruba Chandni Gulbadan Hai / حسیں دلربا چاندنی گل بدن ہے

حسیں دلربا چاندنی، گلبدن هے
عجب ہے نزاکت غضب بانکپن ہے لبوں پر تبسم جگر میں چبھن ہے
بتاوُ  یہ کیسا تمھارا  چلن ہے دیاراپنا دیکھو چمن در چمن ہے
مگر اسکے اندر گھٹن ہی گھٹن ہے وہ مستی میں رہتا ہے سر مست ایسے
محبت کی پروا نہ شوقِ سخن ہے یہاں پر مذاہب میں بھی ہے تنوّع
بہت خوبصورت ہمارا وطن ہے وہ جیسا بھی ہو ،میرا محبوب ہے وہ
وہ میری ہے خلوت مری انجمن ہے
(بشیر مہتاب)
Hasee'n Dilruba Chaandni, Gulbadann Hai
Ajabb Hai Nazaakat Gazab BaaNkpann Hai
Labu'n Par Tabassum Jigar MaiN Chubann Hai
Batao Ye Kaisa Tumhara Chalann Hai
Dyaar Apna Dekho Chamann Darr Chamann Hai
Magar Uskay Andar Guthann Hi Guthann Hai
Woh Masti MaiN Rehta Hai Sarr Mast Aisay
Muhabbat Ki Parwa Na Shouq-e-Sukhn Hai
Yaha'N Par Mazaahib MaiN Bhi Hai Tanu'u
Bohat Khoobsurat Hamara Watann Hai
Woh Jaisa Bhi Ho, Mera Mehboob Hai Woh
Woh Meri Hai Khalut Meri Anjuman Hai

(Bashir Mehtaab) 

Har Taraf Bas Ye Hi Charcha Ho Gaya / ہر طرف بس یہ ہی چرچا ہو گیا

ہر طرف بس یہ ہی  چرچا ہو گیا
وہ اکیلا ہر کسی کا ہو گیا جب حقیقت سامنے آئی تو پھر
لال پیلا اس کا چہرہ ہو گیا اُن نگاہوں نے نہ جانے کیا کیا
شہر بھر میں اک  تماشہ ہو گیا کیوں ہے چُپ اے برہمن  کچھ تو  بتا
اک سمندر کیسے صحرہ  ہو گیا جب تھی غربت نفرتیں تھی کس قدر
آج کل  میں جاں سے پیارا  ہو گیا ہاتھ چھوڑا مسکراتے اس طرح
بس کہ پھر مہتاب تنہا ہو گیا
(بشیر مہتاب)

Ash'aar - (Collection-4)

(1)
پیار عشق و وفا محبت سب
ہیں تماشے رچائے دُنیا نے
......
(2)
ٹوٹتے ہیں اس سے کتنے آشیانے دوستو
کاش لگ جاتے زباں پر خامشی کے قفل جو
......
(3)
آپسی دشمنی اور بڑھنے لگی
راز جن جن کا آنے لگا سامنے
......
(4)
اس قلبِ شکستہ سے آواز نکلتی ہے
انجام محبت کا ایسا نہ ہوا ہوتا
......
(5)
بہت شرمندہ ہوں اپنی خطاؤں پر
خدایا رحم فرما انتَ  مولانا
......
(6)
تری باتیں ہی جھوٹی تھی کہ تجھ سے پیار کیا ہوتا
تُو باتوں میں اُتر جاتی میں وعدوں میں اُتر جاتا
......
(7)
ساتھ اپنے قلم میں رکھتا ہوں
کیوں کہ خوابوں میں شعر لکھتا ہوں
......
(8)
دیکھ کر اُس پہ وار کرتے ہو
جنگ جس نے لڑی نہیں ہوتی
......
(9)
کچھ اُنہیں کم سنائی دیتا ہے
کچھ زبانوں پہ تالے ہیں شاید
......
(10)
یاد آتی ہے  تری دن رات مجھ کو
میں کروں بھی کیسے اظہارِ محبت ......
(11)
ترا دل بھی پشیماں ہے ترے لفطوں میں ویرانی
تجھے مہتاب لے ڈوبی تری اپنی پریشانی  ......
(بشیر مہتاب) -

Ash'aar - (Collection-3)

(1) میں صداقت پہ ہمیشہ سے چلا ہوں اس لئے
لوگ کہتے ہیں کہ تیری رہبری اچھی نہیں
......
(2)
یہی دکھ ہے کسی نے بھی ہمیں مُڑ کر نہیں دیکھا
وفا کی اک نظر کافی تھی دود و غم کے ماروں پر
......
(3)
خامشی اب کے ہو گئی حاوی
کبھی ہم بھی زبان رکھتے تھے
......
(4)
زندگی میں کامیابی کے لئے
ہارنا بھی ہے ضروری دوستو
...... (5)
ہاتھوں کی لکیروں میں تقدیر نہیں ہوتی
مہتاب نصیب اپنا محنت سے ہی بنتا ہے
......
(6)
اک ترے بعد یہ حقیقت ہے
عید میری بھی ہو نہیں سکتی
......
(7)
ظاہراً آج سارے ہیں اپنے
یار دل سے تُو میرا ہو جانا
......
(8)
دُنیا کے ظالمو تم لاکھوں لگا لو تہمت
اک بال بھی ہمارا باکا نہ کر سکو گے
......
(9)
اگر خموش رہی لوگ مار دیں گے اُسے
وہ اپنے بولنے سے ہی حیات ہے اب تک
......
(10)
پیار میں الزام کس پر جانا تھا
اک حسیں پل تھا گزر ہی جانا تھا
......
(11)
مغرور نہیں ہوں میں
مجبور ہو سکتا ہوں
......
(12)
میں اپنے بچپن  کو کیسے کروں بیاں
اک دور تھا حسیں نظروں سے گزر گیا
......
(13)
مہتاب حقیقت سے آگاہ کرو اُن کو
جو لوگ نہیں سمجھے اُردو کا مقام اب تک
......
(14)
خوابوں میں حقیقت میں یادوں میں تمہی…

Ash'aar - (Collection-2)

(1) اس جنگل میں برف نے آگ لگائی ہے
یہ جنگل دن رات سلگتا رہتا ہے  ...... (2)
میرا اس جا رہنا  آسان بھی ہے
تہہ خانے کے اندر روشن دھان بھی ہے
...... (3)
کھینچتا ہے کوئی ان کو کسی منزل کی اور
پاؤں میرے ہیں مگر ان میں سفر کس کا ہے
......
(4)
دکھ یہ ہی ہے  ہمارے  درد الگ ہی تھے
یوں تو میں اس کا تھا اور وہ میری تھی
......
(5)
اس لئے سرخ ہیں مری آنکھیں
ان میں پیارا سا  خواب ٹوٹا ہے
......
(6)
میں نے وہ آب حیات ان کو پلایا ہے جس سے
کوئی موسم ہو مرے پیڑ ہرے بھرے رہتے ہیں
...... (7)
دل سے نکلتی ہیں یہ دعائیں ہزار بار
اللہ ! یار میرے سلامت رہیں سدا
......
(8)
رسوائی ہجر اور بھی کیا کیا دیا تُو نے
اے عاشقی  ستم ترے بھولا نہیں ہوں میں
......
(9)
جو لوگ یہ کہتے ہیں کہاں ہے اردو
کہہ دیجئے ان سے کہ جہاں ہے اردو
دنیا میں تم جس کو   کہتے ہو جنت
ہاں ہاں اسی جنت کی زباں ہے اردو
......
(10)
جینے کے آداب سیکھائے فقط اُردو زباں
اس لئے  مجھ کو زبانِ خسروی اچھی لگی
......
(11)
خوشیاں نئے برس کی مناتے چلے گئے
ہر بار کی طرح یہ دسمبر گزر گیا
......
(12)
ترے آگے نکلنے  کی خوشی میں
میں خود کو کتنا پیچھے چھوڑ آیا

Na Aaya Tarass Aazmanay Se Pehlay / نہ آیا ترس آزمانے سے پہلے

نہ آیا ترس آزمانے سے پہلے
ذرا بھی نہ سوچا بھلانے سے پہلے
جو اشکوں کے گرنے سے ڈرتی تھی بے حد
اسے تھامتے تم رلانے سے پہلے تڑپ اس کے اندر تھی بدلے کی لیکن
نہایت وہ روئی رلانے سے پہلے مرے قلب تیری خطائیں ہیں ساری
ذرا فکر کرتا بھلانے سے پہلے بہت ہی کٹھن راستہ ہے وفا کا
ذرا سوچتے دل لگانے سے پہلے یقیناً ہی سو بار سوچے گا وہ بھی
صنم فون میرا اٹھانے سے پہلے خیال اپنے اشکوں کا رکھنا تھا تم کو
خیالی فسانہ سنانے سے پہلے یہ پہلے نہ سوچا کیا حشر ہو گا
کسی میں محبت جگانے سے پہلے ابھی تھام دامن وہ مہتاب جا کر
تو بِگڑے ہوئے اس زمانے سے پہلے
(بشیر مہتاب)

Na Aany Ke Unn Ke Bahanay Bhi Dekhe'n / نہ آنے کے اُن کے بہانے بھی دیکھے

ﻧﮧ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
ﺑﮍﮮ ﺳﻨﮓ ﺩﻝ ﻭﮦ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺍُﺩﮬﺮ ﺑﻠﺒﻠﯿﮟ ﺭﻭ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﻗﻔﺲ ﮐﻮ
ﮐﮧ ﺻﯿﺎﺩ ﮔﺎﺗﮯ ﺗﺮﺍﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﻏﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﻼﻧﮯ ﺟﻮ ﻧﮑﻠﮯ ﮨﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ
ﺍﺳﯽ ﺩﮬﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺑﺎﺩﮦ ﺧﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﻧﮧ ﭘﺎﯾﺎ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮐﮯ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﻟﻮﭨﮯ
ﺳﺒﮭﯽ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﮯ ﭨﮭﮑﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ﻭﻗﺖ ﻣﮩﺘﺎﺏ ﺍﭘﻨﺎ
ﺑﮩﺖ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
(بشیر مہتاب)

Hum Hatheli Pe Jaan Rakhtay Hai'n / ہم ہتھیلی پہ جان رکھتے ہی

ﮨﻢ ﮨﺘﮭﯿﻠﯽ ﭘﮧ ﺟﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﻭﺭ تیریﺍﻣﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﭼﻨﺪ اشکوں ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ صاحب
ﺗﯿﺮﯼ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻢ ﮔﺰﺭﺗﮯ ﮨﻮ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﺑﻦ ﮐﺮ
ﮨﻢ تو ﺩﻝ ﭘﺮ ﭼﭩﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﮨﻢ ﺑﺲ ﺍﮎ ﮨﻤﯿﮟ ﮨﻢ ﮨﯿﮟ
ﺩﻭﺳﺖ ﮐﯿﺴﺎ ﮔﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﭩﮭﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻣﻄﻠﺐ
ﮨﺮ ﮔﮭﮍﯼ ﺳﯿﻨﮧ ﺗﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﺘﻨﮯ ﺷﺎﻃﺮ ﮨﯿﮟ وہ ﻣﺮﮮ ﮨﻤﺪﻡ
ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮ ﻭ ﮐﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ کاٹ ﻟﻮ "ﭘﺮ" ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻢ
ﺣﻮﺻﻠﻮﮞ میں ﺍﮌﺍﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺧﺎﻣﺸﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺭﮨﯽ ﻣﮩﺘﺎﺏ
ﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ
 - (بشیر مہتاب)

Maana Usko Gila Nahi'n Mujh Se / مانا اسکو گلہ نہیں مجھ سے

مانا اسکو گلہ نہیں مجھ سے
کچھ تو ھے جو کہا نہیں مجھ سے

حق نہیں دوستی کا ایسا کوئی
جوکہ اسکو ملا نہیں مجھ سے

دل ھی دل میں وہ بغض رکھتا ھے
جو بظاہر خفا نہیں مجھ سے

کچھ تو ھوگا ضرور اسکا سبب
   وہ جو اب تک لڑا نہیں مجھ سے

لاکھ پیچھا چھڑانا چاھا مگر
غم ھوا ھی جدا نہیں مجھ سے

کیسے رہ پائے گا وہ میرے بغیر
جو الگ ہی رہا نہیں مجھ سے

جو بظاہر خفا ھے اے مہتاب
وہ بہ باطن خفا نہیں مجھ سے (بشیر مہتاب)

Aaj Kal Ke Shabaab Dekhe'n Hai'n / آج کل کے شباب دیکھے ہیں

آج کل کے شباب دیکھے ہیں
سارے خانہ خراب دیکھے ہیں

پھول جیسے حسین چہرے بھی
ہائے سہتے عذاب دیکھے ہیں عشق کی راہ میں وہ لٹتے ہوئے
ہم نے لاکھوں جناب دیکھے ہیں ہے یہ الفت بھی کیا بلا صاحب
اس میں جھکتے نواب دیکھے ہیں ایک اک پل کو یاد رکھتے تھے
وہ تمہارے حساب دیکھے ہیں تم ہٹا دو یہ اپنے چہرے سے
ہم نے کافی نقاب دیکھے ہیں پہلے محسن تھے پھر بنے ظالم
لوگ ایسے عتاب دیکھے ہیں جس پہ مہتاب تم رہے مرتے
اب وہ ہوتے سراب دیکھے ہیں
(بشیر مہتاب)

Gazal - Zal'zala / غزل - زلزلہ

خاک نقشِ امان پل بھر میں
روتے دیکھا جہان پل بھر میں کیسے منظر سمائے نظروں میں
ریزہ ریزہ چٹان پل بھر میں اب لبوں پر رہے اسی کا نام
دیکھ لی رب کی شان پل بھر میں یک بیک مسکراہٹیں غائب
تن سے نکلی ہے جان پل بھر میں

ہنستے ہنستے ہی روپڑے یکسر
یہ زمیں آسمان پل بھر میں کوئی جائے پناہ مل جائے
پھنس گئی کیسے جان پل بھر میں ہے کہانی نہ کوئی افسانہ
بن گئی داستان پل بھر میں

کیسی پر شکوہ تھی عمارت وہ
ہے جو کھنڈر مکان پل بھر میں زلزلے نے یہ کیا کیا مہتاب
کیسے ہوگا بیان پل بھر میں
(بشیر مہتاب)

Ek Munaajaat - Dua - اک مناجات - دعا

الٰہی تو سب کی خطا درگذر کر
خدایا تو پیدا دلوں میں حذر کر سنا ہے کٹھن ہے وہ منزل لحد کی
تو آسان سب کا اے مولٰی سفر کر ہوئے فوت ہیں قلب یا رب ہمارے
تو اپنے کرم سے تو ان کو امر کر میں سب بھول جاؤں وفا اس جہاں کی
کہ بس تو ہی تو ہو زباں میں اثر کر ہوئے پھر سے پیدا نبی کے مخالف
تو زندہ وہ پھر سے علی کر عمر کر کہ بن جائے خادم ہمیشہ ہی تیرا
تو مہتاب پر عشق کا وہ اثر کر 
(بشیر مہتاب)

Gazal -Bachpann / غزل - بچپن

۔               
کہیں دریا کہیں دھارا کہیں پانی تھا بارش کا کہیں کاغذ کی کشتی تھی وہی تو یار بچپن تھا
کبھی ہنسنا کبھی رونا کبھی لڑنا کبھی گرنا شکایت بھی نہ کرتا تھا وہ کیسا یار بچپن تھا
کہ رونق ہر گھڑی ہوتی تھی میرے آشیانے میں نہ تھا دشمن کوئی اپنا وہ پر اسرار بچپن تھا
کہ کھیلا تھا کہیں ہم نے بھی کاغذ کے جہازوں سے بتائیں کیا ہمارا تو بڑا فنکار بچپن تھا
کبھی مٹی کے برتن تھے کبھی مٹی کی گڑیا تھی وہ ننھے سے کھلونوں کا بھی اک بازار بچپن تھا
وہ جس میں دودھ گھی یارو کھلاتی تھی ہمیں نانی جوانی اور نادانی میں وہ دیوار بچپن تھا
کبھی ہم ضد بھی کرتے تھے کبھی کہنا بھی مانا تھا کبھی آسان بچپن تھا کبھی دشوار بچپن تھا
جہاں سارا یہ عالم اک کُھلے دفتر کے جیسا تھا نہ تھی کوئی پریشانی گل و گلزار بچپن تھا
گیا ہاتھوں سے اک دم اس طرح پیارا مرا بچپن کہ جیسے تھا کوئی درہم کوئی دینار بچپن تھا
(بشیر مہتابؔ )

Urdu Ki Pehli Sahibe Dewaan Aurat - CHANDRA WATI Sahiba / ﺍُﺭﺩﻭ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﺻﺎﺣﺐِ ﺩﯾﻮﺍﻥ ﺷﺎﻋﺮﮦ - ﭼﻨﺪﺭﺍﻭﺗﯽ

ﺍُﺭﺩﻭ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﺻﺎﺣﺐِ ﺩﯾﻮﺍﻥ ﺷﺎﻋﺮﮦ
=================
ﺑﻠﺒﻞ ﮐﻮ ﮨﻮ ﺑﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﮔﻠﺰﺍﺭ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ
ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺪﺍ ﮨﮯ ﻣﺮﮮ ﯾﺎﺭ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ
===
ﮨﻢ ﺟﻮ ﺷﺐ ﮐﻮ ﻧﺎﮔﮩﺎﮞ ﺍﺱ ﺷﻮﺥ ﮐﮯ ﭘﺎﻟﮯ ﭘﮍﮮ
ﺩﻝ ﺗﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﯽ ﺭﮨﺎ ﺍﺏ ﺟﺎﻥ ﮐﮯ ﻻﻟﮯ ﭘﮍﮮ
===
ﺭﻭﺯِ ﺍﻭﻝ ﺟﻮ ﺟﺎﻡِ ﻣﺤﺒﺖ ﭘﻼ ﺩﯾﺎ
ﺳﺮﺧﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺏ ﺗﮏ ﺧﻤﺎﺭ ﮐﯽ
===
ﮔُﻞ ﮐﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﻮﻗﻊ ﭘﮧ ﺟﺌﮯ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮨﮯ
ﮨﺮ ﮐﻠﯽ ﺟﺎﻥ ﮐﻮ ﻣﭩﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﻟﺌﮯ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮨﮯ
===
ﮨﻤﺎﺭﯼ ﭼﺸﻢ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻤﺎﻝ ﭘﺎﯾﺎ ﮨﮯ
ﺟﺪﮬﺮ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺌﮯ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻧﻈﺮ ﮨﻢ ﮐﻮ === ﻗﻠﻤﯽ ﻧﺎﻡ ﭼﻨﺪﺍ ، ﻣﺎﮦ ﻟﻘﺎ ﺑﺎﺋﯽ ﻧﺎﻡ ﭼﻨﺪﺭﺍﻭﺗﯽ ﻧﺎﻡ ﻭﺍﻟﺪ ﺑﮩﺎﺩﺭ ﺧﺎﮞ ﺷﺎﻋﺮ ﺣﯿﺪﺭ ﺁﺑﺎﺩ ﺩﮐﻦ , ﺑﮭﺎﺭﺕ

Ek Lamha Bhi Guzaaru Bhala Kyu'n Kisi Ke Saath / اک لمحہ بھی گزاروں بھلا کیوں کسی کے ساتھ

اک لمحہ بھی گزاروں بھلا کیوں کسی کے ساتھ
گزرے تمام عمر مری آپ ہی کے ساتھ

جب ہاتھ دوستی کا بڑھا یا خوشی کے ساتھ
اس نے مجھے قبول کیا خوش دلی کے ساتھ

دل سے کیا ہے یاد اُسے میں نے جب کبھی
اظہار - ہجر کرتی ہیں آنکھیں نمی کے ساتھ

اک بار میرے یار نے  ایسا کیا مزاق
اللہ رے نہ ہو کبھی ایسا  کسی کے ساتھ

 اس طرح منسلک ہوا اردو زبان سے
ملتا ہوں اب سبھی سے بڑی عاجزی کے ساتھ

باقی رہی ہے  دل میں یہ  حسرت تمام عمر
مہتاب کا دیار ہو اُس کی گلی کے ساتھ (بشیر مہتاب)

Yaar Be-Khabar Ho Tum / یار بے خبر ہو تم

یار بے خبر ہو تم میرے ہم سفر ہو تم یار بے خبر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم اچھے یا بُرے ہو تم
میرے توجگر ہو تم تم ہی شام ہو میری
اور مری سحر ہو تم ڈرتا ہوں جدائی سے
پاس میں مگر ہو تم جستجو ہے منزل کی
میری تو ڈگر ہو تم ہو قریب دل سے بھی
ہاں جی ہاں جگر ہو تم آؤ میری نیندو میں
میرے خواب گر ہو تم تھی تلاش جس در کی
وہ حسین در ہو تم تیرا میرا کیا رشتہ
میرے تو نگر ہو تم آفتاب میرے ہو
یا مرے قمر ہو تم جان میری تم ہی ہو
بس تمام ذر ہو تم میرے ہم سفر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم یار بے خبر ہو تم
میرے ہم سفر ہو تم 
(محمد بشیر مہتاب)