Posts

Showing posts from April, 2017

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا
ایفائے  وعدہ  کو  کوئی وعدہ نہیں رہا

اشکوں سے کیسے درد کو ظاہر کرینگے ہم
آنکھوں میں اب تو ایک بھی قطرہ نہیں رہا

پہلے تو ہوتا تھا مرا چرچا گلی گلی
شاید یہ شہرِ غیر ہے چرچا نہیں رہا

ارمان پورے ہو کے بھی جذبات رہ گئے
"کشتی ہوئی نصیب تو دریا نہیں رہا"

اک بار میرے چاکِ گریباں پہ کر نظر
تیرا  تو  در  کنار  میں اپنا نہیں رہا

 اب مت پکار اُس کو دلِ بے قرار تو
کر لے مرا  یقین  وہ  تیرا  نہیں  رہا

کیاجانےکیوں انہیں بھی کھٹکنے لگا ہوں میں
کیوں اُن کے گھر میں میرا بسیرا نہیں رہا

ان کی نگاہِ ناز کا یہ بھی ہے ایک رنگ
جیسامیں پہلےرہتا تھا ویسا نہیں رہا

(بشیر مہتاب)

Mere Qareeb Se Jab Meharbaa'n Rawaana Huwa / مرے قریب سے جب مہرباں روانہ ہوا

مرے قریب سے جب مہرباں روانہ ہوا
زمیں کھسک گئی اور آسماں روانہ ہوا

وہ  میرا گھر مرے اجداد  کی نشانی تھی
لگا کے آگ  جسے کارواں روانہ ہوا

ذرا سی دیر سنی ہوتی گفتگو میری
مرے خلاف لئے کیوں گماں روانہ ہوا

ہم ایک ساتھ رہیں گے کیے تھے قول و قرار
بنا کے مجھ کو تُو مجنوں کہاں روانہ ہوا

خموش رہتے ہو کیوں بار بار کہتا تھا
 وہ سن کے درد بھری داستاں روانہ ہوا

غمِ جدائی اب اک پل سہی نہیں جاتی
الٰہی مجھ کو بتا وہ کہاں روانہ ہوا

وہ جس کو خود سے لڑائی لڑی نہیں جاتی
اُٹھا کے کاندھوں پہ تیرو کماں روانہ ہوا

خدا ہمیشہ سلامت رکھے اُسے مہتاب
سکھا کے تجھ کو جو  اردو زباں روانہ ہوا
(بشیر مہتاب) Mere Qareeb Se Jab Meharbaa'n Rawaana Huwa Zamee'n Khisakhh Gaye Aur Aasmaa'n Rawaana Huwa  Woh Mera Ghar Mere Ajdaad Ki Nishaani Thi Laga Ke Aag Jisey Kaarvaa'n Rawaana Huwa Zara Si Daer Suni Hoti Guf'tugu Meri Mere Khilaaf Liye Kyu'n Gumaa'n Rawaana Huwa Hum Aik Saath Rahenge Kiye Thay Qoul-o-Qaraar Bana Key Mujh Ko Tu Majnu'n Kahaa'n Rawaana Huwa Khamosh Rehte Ho Kyu'n Baar Baar Kehta Tha Woh Sunn Ke…