BooDhi Za’eef Aajiz Sochay Nikaal Kar / بوڑھی ضعیف عاجز سوچیں نکال کر

بوڑھی ضعیف عاجز سوچیں نکال کر
وہ چل رہے  ہیں اپنی روحیں نکال کر

جس شہر ہم گئے وہ اندھوں کا شہر تھا 
ہم نے بھی رکھ دیں اپنی آنکھیں نکال کر

دریا کو ہے  سمندر کی خامشی پسند 
دریا بھی بہہ رہا ہے موجیں نکال کر

دل کا  کوئی تعلق اُن سے ضرور تھا 
جو چل دئے ہیں دل کی  تاریں نکال کر 

مہتاب کوچہء دل   روحِ خیال سے
  آساں نہیں ہے لانا  غزلیں نکال کر

بشیر مہتاب

booDhi za’eef aajiz sochay nikaal kar
woh chal rahay hai apni rūheiñ nikaal kar

jis shehar hum gaye woh andhuñ ka shehar tha
hum nay bhi rakh di apni aankheiñ nikaal kar

darya ko hai samandar ki khaamshi pasand
darya bhi beh raha hai moujaiñ nikaal kar

dil ka koi ta’luq unn se zaroor tha
jo chal diye hai dil ki taarey nikaal kar

Mehtaab kocha’ dil rooh-e-khayal say
aasaañ nahiñ hai laana gazleiñ nikaal kar

Bashir Mehtaab

Comments

POPULAR POSTS:

Gazal -Bachpann / غزل - بچپن

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

Haseen Dil Ruba Chandni Gulbadan Hai / حسیں دلربا چاندنی گل بدن ہے

Yaar Be-Khabar Ho Tum / یار بے خبر ہو تم

Ye Kon Aagaya Hai Ye Kaisi Bahaar Hai / یہ کون آگیا ہے یہ کیسی بہار ہے