Hum Agar Unn Se Darr Gaye Hotey / ہم اگر اُن سے ڈر گئے ہوتے

ہم اگر اُن سے ڈر گئے ہوتے
دل کے دیوار و در گئے ہوتے

پگڑیاں گر نہیں گئی ہوتی
تو یقینً تھا سر گئے ہوتے

 دشمنِ جاں نے زندگی بخشی
"اس سے اچھا تھا مر گئے ہوتے"

ہم کو تم سے ہی پیار تھا ورنہ
کتنے آئے قمر گئے ہوتے

وقتِ ہجراں میں شہرِ جاناں سے
کاش ہم  بے خبر گئے ہوتے

آپ کے ساتھ ساتھ چلتے اگر
منزلوں تک سفر گئے ہوتے

ہم جو ہوتے وفاؤں کے پیکر
نفرتوں کے جگر گئے ہوتے

اب بھی کھلتی اگر نہ تیری زبان
جانے کتنے ہی سر گئے ہوتے

ہوتے انجامِ عشق سے واقف
اپنی اپنی ڈگر گئے ہوتے

(بشیر مہتاب)

Comments

POPULAR POSTS:

Gazal -Bachpann / غزل - بچپن

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

Haseen Dil Ruba Chandni Gulbadan Hai / حسیں دلربا چاندنی گل بدن ہے

Yaar Be-Khabar Ho Tum / یار بے خبر ہو تم

Sab ki mojudgi samjhta hai/ سب کی موجودگی سمجھتا ہے