Na Aany Ke Unn Ke Bahanay Bhi Dekhe'n / نہ آنے کے اُن کے بہانے بھی دیکھے


ﻧﮧ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
ﺑﮍﮮ ﺳﻨﮓ ﺩﻝ ﻭﮦ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
ُﺩﮬﺮ ﺑﻠﺒﻠﯿﮟ ﺭﻭ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﻗﻔﺲ ﮐﻮ
ﮐﮧ ﺻﯿﺎﺩ ﮔﺎﺗﮯ ﺗﺮﺍﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
ﻏﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﻼﻧﮯ ﺟﻮ ﻧﮑﻠﮯ ﮨﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ
ﺍﺳﯽ ﺩﮬﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺑﺎﺩﮦ ﺧﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
ﻧﮧ ﭘﺎﯾﺎ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮐﮯ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﻟﻮﭨﮯ
ﺳﺒﮭﯽ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﮯ ﭨﮭﮑﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ
ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ﻭﻗﺖ ﻣﮩﺘﺎﺏ ﺍﭘﻨﺎ
ﺑﮩﺖ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ

(بشیر مہتاب)

Comments

POPULAR POSTS:

Gazal -Bachpann / غزل - بچپن

Mera Nahi Raha Tu, Mai Tera Nahi Raha / میرا نہیں رہا تُو, میں تیرا نہیں رہا

Haseen Dil Ruba Chandni Gulbadan Hai / حسیں دلربا چاندنی گل بدن ہے

Yaar Be-Khabar Ho Tum / یار بے خبر ہو تم

Sab ki mojudgi samjhta hai/ سب کی موجودگی سمجھتا ہے